نبی کریم صلی اللہ علیه وسلم بحیثیت ایک مدبر و ماہر سیاست

0
2039

بقلم : محمد زبیر ندوی شیروری

ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻟئے ﺟﻮ ﺩﯾﻦ ﺑﮭﯿﺠﺎ ، ﻭﮦ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺩﯾﻦ ﮨﮯ ، ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ بھی ﮨﮯ ۔ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﮨﮯ اﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﮯ ﺁﺋﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﺳﮑﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ . ﺍﻭﺭ ﺟﺘﻨﺎ اس کا ﺗﻌﻠﻖ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﺗﻨا ہی ﺣﮑﻮﻣﺖ سے بھی ہے . لہٰذا ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﻧﮯ جس طرح ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﮭﺎﯾﺎ اسی طرح ﻣﻠﮏ عرب ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻋﻤﻼً ﺟﺎﺭﯼ ﻭ ﻧﺎﻓﺬ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ کے دکھایا ، اسی لئے نبی کریم ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ہمارے لئے ﺑﺤﯿﺜﯿﺖ ﺍﯾﮏ ﻣﺰﮐّﯽ و ﻣﻌﻠﻢ ﺍﺧﻼﻕ ، ﺍﺳﻮﮦ ﺍﻭﺭ ﻧﻤﻮﻧﮧ ﮨﮯ ، ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﺤﯿﺜﯿﺖ ﺍﯾﮏ ﻣﺎﮨﺮ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﻭ ﻣﺪﺑﺮ ﮐﺎﻣﻞ ﺑﮭﯽ .

ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺑﻌﺜﺖ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻋﺮﺏ ﻗﻮﻡ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﮩﺎﯾﺖ خستہ ﺣﺎﻝ ﻗﻮﻡ ﺗﮭﯽ . ﺍﮨﻞ ﻋﺮﺏ ﺍﺳﻼﻡ سے قبل ﻭﺣﺪﺕ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﮐﺰﯾﺖ ﺳﮯ ناﺁﺷﻨﺎ اور ﺍﻧﺎﺭﮐﯽ ﮐﺎ شکار تھے ۔ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﻡ ﺟﻨﮕﺠﻮ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﮨﻢ ﻧﺒﺮﺩ ﺁﺯﻣﺎ ﻗﺒﺎﺋﻞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻣﺠﻤﻮﻋﮧ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﻗﻮﺕ ﻭ ﺻﻼحیت آپسی خانہ جنگی اور ﻟﻮﭦ ﻣﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ۔ کوئی برائی ایسی نہ تھی جو ان میں نہ ہو . لہٰذا وہ اجتماعی و سیاسی زندگی کی بنیادی چیزوں ﺍﺗﺤﺎﺩ ، ﺗﻨﻈﯿﻢ ، ﺷﻌﻮﺭ ﻗﻮﻣﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺣﮑﻢ ﻭ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﻭﻏﯿﺮﮦ سے یکسر ﻣﻔﻘﻮﺩ ہو چکی تھی ۔ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﺑﺪﻭﯾﺎﻧﮧ ﺣﺎﻟﺖ ﭘﺮ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﺗﮏ ﺯﻧﺪﮔﯽ گذارتے گذارتے اس کا مزاج اتنا سخت ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﻭﺣﺪﺕ ﻭ ﻣﺮﮐﺰﯾﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﺮﻣﺤﺎﻝ ﺑﻦ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ۔ﺧﻮﺩ ﻗﺮﺁﻥ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻗَﻮْﻣًﺎ ﻟُّﺪًّﺍ ‘ ﮐﮯ ﻟﻔﻆ ﺳﮯ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﺟﮭﮕﮍﺍﻟﻮ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﺣﺪﺕ ﻭﺗﻨﻈﯿﻢ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ” ﻟَﻮْ ﺍَﻧْﻔَﻘْﺖَ ﻣَﺎ ﻓِﯽ ﺍﻟْﺎَﺭْﺽِ ﺟَﻤِﯿْﻌًﺎ ﻣَّﺂ ﺍَﻟَّﻔْﺖَ ﺑَﯿْﻦَ ﻗُﻠُﻮْﺑِﮭِﻢْ ” ( ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﺧﺰﺍﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺧﺮﭺ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﺘﮯ تب ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﮌ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﮯ ﺗﮭﮯ ‏) ﻟﯿﮑﻦ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﻧﮯ تیئیس (23) ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻗﻠﯿﻞ ﻣﺪﺕ ﻣﯿﮟﺍﭘﻨﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻭ ﺗﺒﻠﯿﻎ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻋﻨﺎﺻﺮ ﮐﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺟﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﻡ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﯿﺎﻥ ﻣﺮﺻﻮﺹ ﺑﻦ ﮔﺌﯽ ۔ اور ﺍس کے ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﭘﺎﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺳﺒﺎﺏ ﻧﺰﺍﻉ ﻭ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐر کے دور ہو گئے اور وہ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ کے لئے ﺍﺗﺤﺎﺩ ﻭ اتفاق ﮐﺎ ﭘﯿﻐﺎﻡ دینے لگی ۔ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﻃﺎﻋﺖ و فرمانبرداری ﮐﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺻﻼﺣﯿﺘﯿﮟ ﺍﺑﮭﺮ ﺁﺋﯿﮟ ﮐﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﺳﺘﻌﺎﺭہ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ، ﺑﻠﮑﮧ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ بھی ﯾﮧ ﻗﻮﻡ ﺷﺘﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺑﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻡ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﯽ ۔ اﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﻼﺍﺳﺘﺜﻨﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﮨﯽ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﮞ ﺑﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺩﺭﺱ ﺩﯾﺎ ۔

ﺍﺱ ﺗﻨﻈﯿﻢ ﻭ ﺗﺎﻟﯿﻒ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺧﺼﻮﺻﯿﺖ ﯾﮧ تھی ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺍﺻﻮﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺗﻨﻈﯿﻢ ﺗﮭﯽ ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺗﻮ ﻗﻮﻣﯽ ، ﻧﺴﻠﯽ ، ﻟﺴﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻐﺮﺍﻓﯿﺎﺋﯽ ﺗﻌﺼﺒﺎﺕ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ اور ﻧﮧ ہی ﻗﻮﻣﯽ ﺣﻮﺻﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﯿﺨﺖ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺎﻡ ﻟﯿﺎ اور ﻧﮧ ہی ﺩﻧﯿﻮﯼ ﻣﻔﺎﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻻﻟﭻ ﺩﻻﯾﺎ اور ﻧﮧ ہی ﮐﺴﯽ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮯ ﮨﻮّوں ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﮈﺭﺍﯾﺎ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﺘﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮍﮮ ﻣﺪﺑﺮ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺩﺍﻥ ﮔﺰﺭﮮ ﮨﯿﮟ ، ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﻣﻨﺼﻮﺑﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﺍنہی ﻣﺤﺮﮐﺎﺕ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ۔ ﺍﮔﺮ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺳﻠﻢ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﮭﺎﺗﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﻣﺰﺍﺝ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﮨﻮﺗﯽ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺍﻥ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻓﺘﻨﮧ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﺮ ﻓﺘﻨﮧ ﮐﯽ ﺧﻮﺩ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﯿﺦ ﮐﻨﯽ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ۔ اور ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ میں ﺻﺮﻑ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﺑﻨﺪﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻃﺎﻋﺖ ، ﻋﺎﻟﻢ ﮔﯿﺮ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺍﺧﻮﺕ ، ﮨﻤﮧ ﮔﯿﺮ ﻋﺸﻖ ﻭ ﺍﻧﺼﺎﻑ ، ﺍﻋﻼئے کلمۃ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﻑ ﺁﺧﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﺤﺮﮐﺎﺕ کو ﺟﮕﺎﯾﺎ ۔ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﺤﺮﮐﺎﺕ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﺗﮭﮯ ، ﺍﺱ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻣﺴﺎﻋﯽ ﺳﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺍﻣﺖ ﻇﮩﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯽ ﺟﺲ ﮐﯽ صفت ﯾﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ کہ ” ﮐُﻨْﺘُﻢْ ﺧَﯿْﺮَ ﺍُﻣَّۃٍ ﺍُﺧْﺮِﺟَﺖْ ﻟِﻠﻨَّﺎﺱِ ﺗَﺎْﻣُﺮُﻭْﻥَ ﺑِﺎﻟْﻤَﻌْﺮُﻭْﻑِ ﻭَﺗَﻨْﮭَﻮْﻥَ ﻋَﻦِ ﺍﻟْﻤُﻨْﮑَﺮِ ” ﺗﻢ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺍﻣﺖ ﮨﻮ ﺟﻮ لوگوں کے لئے نکالی گئی ہو تم ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ دیتے ہو اور برائی سے روکتے ﮨﻮ “ آﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﭽﮏ ﻗﺒﻮﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ۔ﻧﮧ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻞ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻞ ﻣﯿﮟ ۔ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺳﺨﺖ ﺳﮯ ﺳﺨﺖ ﺣﺎﻻﺕ ﺳﮯ ﺳﺎﺑﻘﮧ ﭘﯿﺶ ﺁﯾﺎ ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﺳﺨﺖ ﺣﺎﻻﺕ ﺳﮯ ﮐﮧ ﻟﻮﮨﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻞ ﻣﯿﮟ ﻧﺮﻡ ﭘﮍ ﺟﺎﺗﺎ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﭖ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﺨﺘﯽ ﺳﮯ ﺩﺏ ﮐﺮ ، ﮐﺴﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﻤﺠﮭﻮﺗﺎ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﺸﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﯽ ﮔﺌﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺩﯾﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﻮﯼ ﻣﺼﻠﺤﺘﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﯿﺰ ﺁﭖ ﮐﻮ متاثر ﯾﺎ ﻣﺮﻋﻮﺏ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺳﮑﯽ ۔ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺁﭖ ﺟﺐ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮕﮧ ﭘﺮ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ ﻟﮑﯿﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺛﺎﺑﺖ ﻭ ﻗﺎﺋﻢ ﺗﮭﯽ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻣﺪﺑﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺩﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﺪﺑﺮ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺩﺍﻥ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ ﺁﭖ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﮯ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭ ﭼﺎﺭ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﭘﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﺎ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮ ﺳﮑﺎ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﯾﮧ ﺩﻋﻮﯼٰ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺳﮑﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ہو ﯾﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﭨﮭﻮﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﺎﺋﯽ ہو لیکن آپ نے ﮐﺴﯽ ﺫﺍﺗﯽ ﻣﻔﺎﺩ ﯾﺎ ﻣﺼﻠﺤﺖ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺮﻣﯿﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﭘﻨﮯ پیش کردہ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ کے لئے جان مال اور محبوب چیزوں ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎنی دی ہر طرح کے خطرات و ﻧﻘﺼﺎﻧﺎﺕ ﮔﻮﺍﺭﺍ کئے ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺣﻔﺎﻇﺖ فرمائی ۔ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﯽ ﻧﻮﺑﺖ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﻋﻮﺕ ﺗﻮ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ ﻓﻼﮞ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﯽ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺏ ﺣﮑﻤﺖ ﻋﻤﻠﯽ ﮐﺎ ﺗﻘﺎﺿﺎ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﭘﺮ ﻓﻼﮞ ﺑﺎﺕ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﻟﯽ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﻮ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﺮ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺁﻟﻮﺩﮔﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﺎﮎ ﺭﮐﮭﺎ . ﺣﻀﻮﺭ ﺍﮐﺮﻡ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺩﺭﺱ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭﺳﭽﺎﺋﯽ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺍﺧﻼﻗﯿﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﮯ ، ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻟﻮﺍﺯﻡ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ، ﺁﭖ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺮﺍﺣﻞ ﺁﭖ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﺁﺋﮯ ﺟﻦ ﮐﮯ ﭘﯿﺶ ﺁﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﻗﻊ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﯾﻞ ﻋﺮﺻﮧ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﻣﻈﻠﻮﻣﯿﺖ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺍﺭﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﻢ ﻭ ﺑﯿﺶ ﺍﺗﻨﺎ ﮨﯽ ﻋﺮﺻﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﺳﻠﻄﻨﺖ گذارا ۔ ﺍﺱ دوران ﺁﭖ ﮐﻮ اپنے ﺣﺮﯾﻔﻮﮞ ﺍور حلیفوں ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﺎﺭﺗﯽ ﻣﻌﺎﮨﺪﮮ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮍﮮ ، ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺟﻨﮕﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ ﭘﮍﯾﮟ ۔ ﻋﮩﺪ ﺷﮑﻨﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺟﻮﺍﺑﯽ ﺍﻗﺪﺍﻣﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮍﮮ ۔ ﻗﺒﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﻭﻓﻮﺩ ﺳﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮍﮮ ۔ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﻓﻮﺩ ﺳﮯ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﻧﯽ ﭘﮍی ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ کے لئے ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻓﻮﺩ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯿﺠﻨﮯ ﭘﮍﮮ ۔ ﺑﻌﺾ ﺑﯿﺮﻭﻧﯽ ﻃﺎﻗﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻓﻮﺟﯽ ﺍﻗﺪﺍﻣﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮍﮮ ۔ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﺎﻡ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺩﻭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﺩﺷﻤﻦ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﮭﻮﭨﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ . ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﻏﻠﻂ ﺗﺎﻭﯾﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ۔ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﮧ ﭼﮑﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ۔ ﮐﺴﯽ ﻣﻌﺎﮨﺪﮦ ﮐﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺧﻼﻑ ﻭﺭﺯﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ . ﺣﻠﯿﻔﻮﮞ ﮐﺎ ناساز گار سے ناساز گار حالات ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﺎ ، ﺍﻭﺭ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺪﺗﺮ ﺳﮯ ﺑﺪﺗﺮ ﺣﺎﻻﺕ ﻣﯿ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﯿﺎ ۔ دنیا کے اندر معمولی معمولی سیاست دانوں کے پاس بڑی بڑی سواریاں ہوا کرتی ہیں مگر ﻧﮧ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﺳﻮﺍﺭﯼ ﺗﮭﯽ ، ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﻗﺼﺮ ﻭ ﺍﯾﻮﺍﻥ ﺗﮭﺎ ، ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﺑﺎﮈﯼ ﮔﺎﺭﮈ ﺗﮭﺎ ۔ ﺁﭖ ﺟﻮ ﻟﺒﺎﺱ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﺘﮯ ، ﺍﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﺮﺍﺣﺖ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﮨﻢ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ۔ آپ ﯾﮧ تصور ﻧﮧ کیجئے ﮐﮧ ﺍﺱ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﮐﯽ ﺑﺪﻭﯾﺎﻧﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺍﺱ ﻃﻤﻄﺮﺍﻕ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﺎﭦ ﺑھاٹ کے ساتھ نہ تھی ، ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﯾﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻏﻠﻂ ﮨﮯ . ایسا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس لئے کیا کہ آپ کی شخصیت پوری دنیا کیلئے رحمۃ اللعالمین بن کر آئی تھی . اور سیاست میں بھی رحمۃ للعالمین کا مثالی نمونہ پوری دنیا کے سامنے پیش کرنا تھا .

   سیاست کیا ہے ؟

ﺳﯿﺎﺳﺖ ﻣﻠﮑﯽ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﮍﮪ ﮐﯽ ﮨﮉﯼ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﺎ ہے . ﻣﻌﺎﺷﺮہ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯼ کے لئے ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺿﺮﻭﺭﯼ ہے ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮨﯽ ﮔﻠﯽ ﻣﺤﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺗﮏ ﮐﯽ ﺩﺭﺳﺘﮕﯽ ﮐﺎ ذﺭﯾﻌﮧ ہے . اﺳﻼﻡ ﺑﮭﯽ ﺷﻌﺒﮧ ﺳﯿﺎﺳﺖ کی ﻣﮑﻤﻞ ﺭﮨﻨﻤﺎﺋﯽ ﮐﺮﺗﺎ ہے ﻟﯿﮑﻦ ﺑﺮ ﺻﻐﯿﺮ ﺳﻤﯿﺖ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﺎﻟﺨﺼﻮﺹ ﯾﻮﺭﭖ ﮐﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﺳﮯ کوسوں ﺩﻭﺭ ہے . اس دور میں سیاست کا تعلق عوامی خدمت کے بجائے ذاتی مفاد سے وابستہ ہو گیا ہے جس سے عوامی حقوق کی پامالی ہو رہی ہے ﺟﺒﮑﮧ سیاست میں ﻋﻮﺍﻣﯽ ﺣﻘﻮﻕ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﯽ ﺍﻣﺎﻧﺖ ﮬﻮﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺍﻣﺎﻧﺖ ﮐﻮ ﺑﻼ ﺗﻔﺮﯾﻖ ﻗﻮﻡ , ﻧﺴﻞ , ﭘﺎﺭﭨﯽ اور ﻋﻼﻗﮧ ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻖ ﺩﺍﺭ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﺎ “ ﺻﺎﺣﺐ ﻋﮩﺪﮦ ” ﮐﯽ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍری ہے ﺍﻭﺭ ﻣﺨﻠﺺ , ﺍﻣﯿﻦ , ﺩﯾﺎﻧﺖ ﺩﺍﺭ ، ﺩﯾﻦ ﻭ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺍﻣﻮﺭ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮨﯽ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭالے بے لوث خادم ﮐﺎ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﮐﺮﻧﺎ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﯽ ﺟﻤﮩﻮﺭﯼ ﺫﻣﮧ ﺩاری ہے لیکن آج کل انتخابات کے وقت ﺑﺮﺍﺩﺭﯼ ,ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ﺍﻭﺭ ذاتی ﻣﻔﺎﺩات کو مد نظر رکھتے ہوئے ﻧﻤﺎئندہ کو منتخب کیا جاتا ہے جو سراسر غلط ہے .

 ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻌﺎﺷﺮہ میں عوامی حقوق کی بحالی ، معاشرتی نظم و ضبط ﺍﻣﻦ ﻭ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﻗﯽ کے لئے ہوا ﮐﺮﺗﯽ ہے لہذا ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺍﺳﯽ بات ﮐﯽ ﮬﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ بوﻗﺖ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﺍﭘﻨﮯ ﺫﺍﺗﯽ ﻣﻔﺎﺩﺍﺕ کے ساﺗﮫ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﻮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮭﺘﮯ ہوئے پوری ﺑﺼﯿﺮﺕ ﮐﯿﺴﺎﺗﮫ ﻏﯿﺮ ﺟﺎﻧﺒﺪﺍﺭﺍﻧﮧ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﮐﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺘﺨﺐ شدہ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭ ﮐﺎ ﻓﺮیضہ ہے کہ وہ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﮩﺪﮮ ﮐﻮ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﺍﻣﺎﻧﺖ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮئے ﻣﮑﻤﻞ ﺩﯾﺎﻧﺖ ﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻼﺹ ﻭ ﺧﺪﻣﺖ ﺧﻠﻖ کے جذبہ سے انجام دینے کی کوشش کرے .

ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم زندگی کے تمام شعبوں میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت مبادکہ سے رہنمائی حاصل کریں تاکہ ہم امن و سکون کی زندگی گذار سکیں .

اظہارخیال کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here